خورشید احمد شاہ نے اللہ تعالیٰ سے سندھ کو عمران خان کے شر سے محفوظ رکھنے کی دعا کردی

 
0
7201

سکھر مارچ 30 (ٹی این ایس): پاکستان پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما سید خورشید احمد شاہ نے اللہ تعالیٰ سے سندھ کو عمران خان کے شر سے محفوظ رکھنے کی دعا کردی کہتے ہیں کہ سندھ صوفیوں اور اولیاء اللہ کی دھرتی ہے اسے عمران خان کی اس تبدیلی سے بچائے جو وہ لانا چاہتے ہیں اور جو وہ تبدیلی پاکستان میں لائے ہیں جس سے وہ ملک میں مہنگائی کا سونامی لائے ہیں اور پشاور میں 40 ارب روپے کا منصوبہ 110 ارب روپے کا ہوگیا ہے ایک روپے کی ملنے والی چیز پانچ روپے میں مل رہی ہے تحقیقات ہونی چاہیے کہ ایک رات میں ڈالر کیسے بڑھا اور اس سے کس کو فائدہ پہنچا اور کیسے اربوں روپے ڈالرز کی صورت میں باہر نکل گئے ان خیالات کا اظہار انہوں نے سکھر میں اپنی رہائش گاہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا سید خورشید احمد شاہ نے مزید کہا کہ وزیر خزانہ بتائیں کہ اس قوم کو اور مزید کتنے کڑوے گھونٹ پینا پڑیں گے آپ نے تو مہنگائی کم کرنے کے وعدے کیے تھے اب کیوں ناکام ہوگئے ہو استعفے دو اور گھر جاؤ دس سال کی بات کرتے ہو پرویز مشرف کے دور کی کیوں بات نہیں کرتے جس نے ملک کی معیشت کو گھٹنوں کے بل بٹھا دیا اس لیے نہیں بولتے کہ یہ پرویز مشرف کی نعم البدل حکومت ہے اس کی کیبنٹ کے وزیر اس کابینہ کا بڑا حصہ ہیں ہم کہتے ہیں آؤ بیٹھو مقابلہ کرو مہنگائی ہوتی ہے تو اس کا نعم البدل بھی ہوتا ہے ایسے راستے تلاش کرنے پڑتے ہیں کہ عوام پر بوجھ نہ پڑے لیکن یہ تو بس ٹیکس لگاؤ اتنے ٹیکس لگاؤ کہ عوام سر اٹھا کر نہ جی سکے ان کا ٹارگٹ ہے کہ عوام کو تباہ و برباد کردو اس حکومت کا نہ کوئی ویڑن ہے اور نہ کوئی فیوچر پلان انہوں نے تو بجٹ میں بھی ان لوگوں کو فائدہ دیا جن لوگوں نے ان کو الیکشن لڑنے کے لیے پیسا دیا حکومت کے اس مہنگائی کیسونامی کا کوئی جواب نہیں ہے اس حکومت کو تو جمہوری کہناہی مناسب نہیں ہے ہم اب بھی حکومت کے ساتھ چلنے کوتیار ہیں مگروہ بیٹھنا ہی نہیں چاہ رہی ہے اس حکومت نے 8000 ارب کاروینیو حاصل کرنے کاٹارگٹ مقرر کررکھا ہے لیکن یہ تو 2018 کے مقابلے میں بھی 4 سو 5 سو ٹارگٹ کم حاصل کرسکی ہے ان کا کہنا تھا کہ انتقامی کاروائی ہمارے لیے کوئی نئی بات نہیں ہے ایوب خان نے بھٹو شہید پر ٹریکٹر کا کیس لگایا تھا لیکن ضیاء الحق کے گیارہ سالہ دور حکومت میں بھی ہم پر ایک الزام ثابت نہیں کیا جاسکا ہمیں جیلوں میں ڈالنا چاہتے ہیں تو ڈال دو مگر عمران خان خود ایک دن بھی جیل برداشت نہیں کرسکے گا کیونکہ وہ کہہ چکا ہے کہ اگر اسے ایک دن بھی جیل میں ڈالا گیا تو وہ مر جائے گا وہ اب تک کنٹینر والی سیاست کررہے انہیں حقیقت کو تسلیم کرنا چاہیے کہ وہ اقتدار میں ہیں ان کا کہنا تھا کہ عمران خان سندھ میں آئیں مگر وہ سندھ میں آکر کہیں گے کہ پیسا نہیں ہے پیسہ دو حالانکہ سندھ ملک کو ساٹھ فیصد ریونیو دیتا ہے مگر اس کے باوجود اس کے پیسے روکے ہوئے ہیں اور یہی سندھ کی بدقسمتی ہے کہ اسے اس کا حصہ نہیں دیا جاتا ہے ہم چاہتے ہیں کہ ملک میں حقیقی جمہوریت آئے لوگوں کے مسائل حل ہوں لیکن ان لوگوں کے پاس تو وہی باتیں ہیں وہی زبان ہے وہ شروع سے جو زبان استعمال کررہے ہیں آج تک کرتے آرہے ہیں