مہاجرین کی کشتی تباہ ہونے سے 140 افراد ڈوب کر ہلاک

0
29

اسلام آباد 30 اکتوبر 2020 (ٹی این ایس): غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اقوام متحدہ کی ایجنسی برائے مہاجرین نے واقعے کو رواں سال اب تک کشتیاں یا چھوٹے بحری جہاز تباہ ہونے کے باعث ڈوب کر ہونے والی ہلاکتوں میں سب سے خطرناک واقعے قرار دیا ہے جس میں 140 افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوچکی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق تباہ ہونے والی کشتی میں 200 افراد سوار تھے جن میں سے 59 افراد کو سینیگال اور اسپین کی بحریہ سمیت قریب ہی موجود مچھیروں نے ریسکیو کرلیا جب کہ ڈوبنے والوں میں سے 20 افراد کی لاشیں بھی نکالی جاچکی ہیں۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کےمطابق کشتی مغربی سینیگال کے ساحل سے اسپین کے کینیری آئس لینڈ کے لیے روانہ ہوئی تھی جس میں چند گھنٹے بعد ہی آگ لگ گئی۔

اقوام متحدہ کے ادارے نے حادثے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ ہفتے بھی اسی ساحل میں ایک کشتی تباہ ہوئی تھی جس کے بعد وسطی بحیرہ روم میں کشتی تباہ ہونے ہونے کا یہ چوتھا واقعہ ہے۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہےکہ ایک اندازے کے مطابق اس سال مغربی افریقا سے کینیری آئس لینڈ کی طرف مہاجرین کی تقریباً 11 ہزار سے زائد کشتیاں روانہ ہوئیں۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین نے حکومتوں اور عالمی برداری پر زور دیا کہ وہ انسانی اسمگلنگ کے ایسے نیٹ ورکس کے خلاف متحد ہوں جو مایوس نوجوانوں سے فائدہ اٹھاتے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here